102

وزیراعظم پاکستان، عمران خان کے نام


ڈاکٹر سید افضل حسین قاسمی
نورنگ دوا خانہ ،بنگلور
9448344458

اصحا بِ نبی کو تُو بر ا بو ل ر ہا ہے
سوچا ہے کبھی تونے کہ، کیا بول رہا ہے

مرزا کا ہے چیلا ، تُو وفا بول رہا ہے
،، اوقات سےاپنی تُو سِوا بول رہا ہے ،،

مرزائی، نیازی میں نہیں فرق رہا کچھ
لگتا ہے کہ طیبہ کا گدا بول رہا ہے!؟

تقدیسِ صحابہ کو تو سمجھا نہیں بوجھا
آئی نہ تجھے کو ئی حیا ، بو ل ر ہا ہے

لوٹا ہے صحابہ نے کبھی مالِ غنیمت
ڈر تجھ کو خدا کا نہ ہُوا ، بول رہا ہے

توبہ تجھے لازم ہے، اہانت کے یہ جملے
گزرا ہے تو اتنا ہے گیا ، بول رہا ہے

ملجائےجوکرسی توضروری ہےسمجھ بھی
جاہل سا تُو بے خوفِ خدا بول رہا ہے

واجب تھا ترا قتل عدالت میں عمر کی
قد سے تو اپنے بول بڑا بول رہا ہے

آئے گی سمجھ تجھ کو کبھی اپنے کہے کی
اِس دَم ترے منصب کا نشا بول رہا ہے

راضی ہے خدا ان سے وہ راضی ہیں خدا سے
دیکھی ہے کہیں ایسی رضا ، بول رہا ہے

اصحابِ نبی ڈر سے رہے قاسمی پیچھے!
کس طرحَ وہ اس طرحَ بھلا بول رہا ہے

کیٹاگری میں : نظم

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں