99

ناطقہ سر بگریباں ہے اسے کیا کہیے!

ممتاز میر
رابطہ:7697376137
اب یہ فیصلہ آئے کہ ۲۵ سال پرانے نوجوانوں کو منصف محترم نے ٹاڈا کا کیس ہونے کے باوجود،اقبالیہ بیانات ہونے کے علی الرغم،مجسٹریٹ کے سامنے مخالف گواہی ریکارڈ کئے جانے کے باوصف’باعزت بری‘کر دیا ہے ،قریب دس دن ہو چکے ہیں۔ہمارے یہاں بدمعاش یا حکمرانوں کا رکھیل میڈیا ملزموں کو ملزم نہیں، پولس اور عدالت سے پہلے مجرم بنا دیتا ہے؛ اس لئے یہ کہنا کہ یہ براء ت با عزت ہے ،حقائق کا مذاق اڑانا ہے ۔تجربہ کار لوگ ہی کہہ سکتے ہیں کہ ہمارا میڈیا عدالت کو کیا ،اپنے ٹرائل کے ذریعے اچھے اچھے معصوموں کو یہ باور کرا دیتا ہے کہ اصلی مجرم وہی ہیں۔حالت یہ ہے کہ کم کیا، بہت زیادہ پڑھے لکھے وہ لوگ، جو دن میں کم از کم دو اخبارات چاٹ ڈالتے ہوں ،کہیں دہشت گردانہ واقعہ ہوتے ہی اپنی قوم کو کوسنا شروع کر دیتے ہیں۔۲۵ ؍سال پہلے ہمارے ساتھ بھی یہ سب ہو چکا ہے ۔آج جو خوشی سے پھولے نہیں سما رہے ہیں، ہمیں دعوتیں دے رہے ہیں ،کل انھوں نے ہی ہمیں گالیاں دی تھیں۔بھُساول کے بڑے بڑے لیڈروں نے، تحریکوں کے اکابرین نے ہمیں دہشت گرد تسلیم کرتے ہوئے ہمارے لئے سخت سے سخت سزا کا مطالبہ کیا تھا سوائے اس وقت کے جلگاؤں کے ایم ایل اے سریش جین کے ۔آپ سوچ سکتے ہیں کے جو لوگ پولس کسٹڈی کے باہر اس طرح کے ’اقبالیہ بیانات ‘دے دیتے ہوں،ان کا پولس کسٹڈی میں کیا حال ہوتا ہوگا، اس سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ پولس کی مار ،خوف کس دہشت کا نام ہے۔ہم تو اللہ سے دعا کرتے ہیں کہ یہ کسی حال میں پولس کسٹڈی میں نہ جانے پائیں ،ورنہ اللہ ہی جانتا ہے کہ قوم کا کیا حال ہوگا۔
یہ بھی ایک افسانہ ہے کہ ہم با عزت بری کر دیے گئے یا کم سے کم ہمیں کوئی سزا نہیں ہوئی،ہم نے سزا بھگتی ہے اور پورے پچیس سال بھگتی ہے ،اگر ہم نے کچھ کیا ہوتا اور اس کی سزا بھی ملتی ،تو وہ اتنی نہ ہوتی ،جتنی ہم نے بھگتی ہے،پورے پچیس سال قریباً ہرتاریخ پر ہم عدالت میں حاضر ہوتے رہے ،میں مدھیہ پردیش سے ،ہمارے ایک ساتھی دلی سے ،دو ساتھی ممبئی سے اور بقیہ بھُساول سے ناسک ٹاڈا کورٹ میں آتے۔ہمارے مالی ،جسمانی اور ذہنی اخراجات ہوتے رہے،عدالتوں کے ججوں کے ساتھ اردلیوں اور سپاہیوں کی گھڑکیاں سنتے رہے،یہ سب کہنے کی باتیں ہیں کہ جب تک جرم ثابت نہ ہوجائے ،آدمی مجرم نہیں ہوتا،خود جج ،جسے معلوم نہیں کیوں Learned کہا جاتا ہے ،جاہلوں کی طرح ہی ملزم سے برتاؤ کرتا ہے،اس سب کے باوجود یہ سمجھنا کہ ہمیں سزا نہ ہوئی بڑی خوش فہمی ہے،مگرجو ہوا ،وہ بھی نہ ہوتا ،تو ہم کیا کر لیتے،دنیا کی کمزور ترین قوم کے افراد جو ہیں!
۲۵ ؍سال پہلے ۲۵؍ دن پولس کا ٹارچر سہنے کے بعدہمیں پولس کسٹڈی سے چھٹکارا نصیب ہوا؛کیونکہ چند دنوں میں پولس ٹارچر سہنے کے بعد ہم نے پولس کے تمام’مطالبات‘پورے کر دیے تھے،اس کے باوجود تین ماہ بعداس وقت کی ٹاڈا کورٹ کے نامزد جج نے ہمیں پہلی ہی درخواست پر ضمانت عنایت کردی تھی،مگر میرے لئے یہ خوشی عارضی تھی؛ کیونکہ مجھے اپنی نوکری دوبارہ حاصل کرنے کے لئے ایک سال تک جدوجہد کرنی پڑی تھی اور یہی کچھ میرے دیگر ساتھیوں کے ساتھ بھی ہوا تھا ،اس کیس کو چلانے میں حکومت مہاراشٹر کو کوئی دلچسپی نہیں تھی؛ اس لیے ہمیں جنوری ۱۹۹۹ء میں بامبے ہائی کورٹ کی اورنگ آباد بنچ میں رٹ پٹیشن داخل کرنی پڑی،اس پر عدالت کا فیصلہ یہ تھا کہ ہر ایک کو ۱ ؍لاکھ روپیہ دے کر کیس ہٹا لیا جائے یا پھر۴۸ ؍گھنٹے کے اندر ٹاڈا کورٹ میں چارج شیٹ داخل کی جائے،جو کردی گئی،کچھ عرصے بعد ٹاڈا ریویو کمیٹی نے ہم پر سے ٹاڈا ہٹانے کی سفارش کردی،جس پر منصف محترم نے حکومت سے یہ وضاحت مانگی کہ یہ بتایا جائے کہ ان پرٹاڈا کیوں لگایا گیا اور اب کیوں ہٹایا جارہا ہے؟جس کی کوئی وضاحت حکومت کی طرف سے پیش نہ کی گئی۔ہم پھرجمعیت العلما(ارشد مدنی) کے تعاون سے ۲۰۱۲ء میں یہ درخواست لے کر سپریم کورٹ گئے کہ ہم پر سے ٹاڈا ہٹایا جائے،مگر ۲۰۱۶ء میں سپریم کورٹ نے فیصلہ دیا کہ ہمیں کیس کی میرٹ پر کچھ نہیں کہنا ہے اور یہ کہ Designated court قانون کی Provisions کے مطابق کیس چلا کر ایک سال میں کیس ختم کرے ۔ دیکھئے یہاں بھی سپریم کورٹ۴ ؍سال میں یہ فیصلہ کر رہی ہے،اسے مطلق یہ احسا س نہیں ہے کہ یہ کیس دہائیوں سے لٹکا پڑا ہے، یہاں ہم جسٹس ایس سی کھٹی کے شکر گزار ہیں ،انھوں نے انتہائی سختی سے کام لے کر کیس کو سال ڈیڑھ سال میں ختم کیا،بصورت دیگر یہ کیس ۲۵ ؍سال اور نکال سکتا تھا۔
ہم باعزت بری کردیے گئے ،مگر ساتھ ہی یہ پخ بھی لگادی گئی کہ ہم چند دنوں میں ۶؍ ماہ کے لئے ضمانت جمع کرائیں؛کیونکہ حکومت کو اپیل میں جانے کے لئے ۶؍ ماہ کا وقت ہے اور ان چھ ماہ کے دوران ہم کہیں ’فرار ‘ نہ ہو جائیں،کتنی حیرت انگیز بات ہے ؟وہ لوگ جو ۲۵؍ سال ضمانت پر رہنے کے باوجود فرار نہ ہوئے اور جنھوں نے جلد سے جلد کیس چلوانے کے لئے ہر طرح کی کوششیں کیں ،ان سے اس بات کی گارنٹی طلب کی جا رہی ہے کہ اپیل سے ڈر کے فرار نہ ہو جائیں،معلوم نہیں common sense کسے کہا جاتا ہے۔
اتفاق سے ہم نے Integrated لا کورس کے ۲ سال کر رکھے ہیں،جس میں ہم نے بھی Justice Delayed is Justice Denied پر ایک مضمون لکھا تھا ، یہ جملہ اب بڑا گھسا پٹا ہو چکا ہے،جج حضرات بھی اکثر اس کی جگالی کرتے دکھائی دیتے ہیں،مگر اس کے حصول کے لئے عملاً کوئی کوشش نہیں کرتا۔اگر جسٹس کھٹی محترم سختی کے ساتھ اپنے احکامات نافذ کرکے کیس کو سال ڈیڑھ سال میں ختم کرسکتے ہیں ،تو دوسرے قابل احترام منصفین ایسا کیوں نہیں کر سکتے؟کیس میں تاخیر کرنے والی پارٹی کو جرمانہ کیوں نہیں کیا جاسکتا ؟ ان کے وارنٹ کیوں نہیں نکالے جا سکتے؟مگر ہمارا mindset یہ ہے کہ انصاف ہو یا نہ ہو،سسٹم فالو ہونا چاہئے؛اسی لئے ہماری عدالت عظمیٰ صرف یہ فیصلہ کرنے کے لئے ۴ ؍سال لگا دیتی ہے کہ کیس کس طرح چلایا جانا چاہئے اور ستم ظریفی یہ ہے کہ وہی دوسرے جج کو یہ حکم بھی دیتی ہے کہ یہ کیس ایک سال کے اندر اندر ختم کردو؛اس لیے ہندو ہو یا مسلمان، سب ہمارے عدالتی نظام کے شاکی رہتے ہیں۔
بڑا عجیب لگتا ہے کہ ایک گینگ ریپ ہوتا ہے، توآسمان سر پر اٹھا لیا جاتا ہے،بچوں سے لے کر قریب المرگ بوڑھے تک میدان میں آجاتے ہیں ۔ ہر قسم کا میڈیاصدیوں سے سوئی کار کردگی دکھا نے لگتا ہے، کینڈل ہی نہیں ،پتا نہیں کون کون سے مارچ نکالے جاتے ہیں ۔یہی حال کبھی قتل اور کبھی دہشت گردانہ حملوں پر ہوتا ہے،مگر کوئی مائی کا لال اس کی جڑوں تک پہنچنے کی کوشش نہیں کرتا،ارے ،یہ ہمارے عدالتی نظام کی غیر کارکردگی تو ہے، جو مجرموں کو تر نوالہ نظر آتا ہے اور معصوموں کا دشمن ۔یہ مجرموں کی ہمت افزائی کرتا ہے اور غریبوں کی ہمت شکنی،کوئی ہے اس پر آواز اٹھانے والا؟ہم ریٹائرڈ جسٹس ٹی ایس ٹھاکر،جسٹس اے ایم احمدی ،جسٹس مارکنڈے کاٹجو،اور جسٹس بی جی کولسے پاٹل سے دست بستہ عرض کرتے ہیں کہ سارے کام چھوڑ کر عدالتی نظام کی صفائی اور تیزی لانے کا کام کریں،اس کے لئے احتجاج کریں ،تحریک چلائیں،یہ آپ حضرات کا قوم پر بڑا احسان ہوگا،اگر عدالتی نظام چست و درست ہو گیا، تو عوام کے ۵۰؍فی صد مسائل خود بخود حل ہو جائیں گے۔
وطن عزیز کے وزرائے اعظم یہ کہتے نہیں تھکتے کہ وہ وطن کو سپر پاور بنائیں گے اور وہ اس کے لئے صرف دو نکات پر توجہ دیتے ہیں:ایک معیشت اور دوسرا دفاع۔کیا عدالتی نظام کی مٹی پلید کرکے اسے تیسری دنیا کی سطح پر رکھ کر ہم سپر پاور بن پائیں گے؟وطن عزیز کے سربراہانِ مملکت کی بڑی بڑی باتیں ایک طرف اور ہمارا عدالتی نظام دوسری طرف ،بین الاقوامی برادری ہمارا مذاق اڑاتی ہے۔میں نے اتفاقاً نیٹ پر’ دی گارجین‘ کا ایک اشو دیکھ لیا تھا، جس میں ہمارے عدالتی نظام کی کھِلی اڑائی گئی تھی،خود ہمارے لا کمیشن ، پارلیمنٹری کمیٹی اور سپریم کورٹ کی سفارشات یہ ہیں کہ ایک ملین افراد پر ۵۰؍ جج ہونا چاہئے،یہ تعداد بھی بین الاقوامیNorms سے کم ہی ہے ،مگر ہمارے یہاں عملاًایک ملین افراد پر صرف ۱۳ ؍جج ہیں،اس طرح دیکھا جائے، تو حکومت کا نکما پن ہے ،جو اپنے چیلے چانٹوں کو ۳۰؍۳۰؍ہزار کروڑ دے کر فرار کروا دیتی ہے،۲۵؍ دسمبر ۲۰۱۷ء کے انڈین ایکسپریس کے ایک مضمون میں جناب سدھارتھ دوے لکھتے ہیں کہ ۱۸۔۲۰۱۷ء کے بجٹ میں جیوڈیشری کے لیے۱۷۴۴ ؍کروڑ یعنی صرف 0.4 % مختص کیا گیا تھا،وکی پیڈیا ہمارے بجٹ کے تعلق سے کہتا ہے کہ یہاں جیوڈیشری کے لئے صرف0.2% بجٹ مختص کیا جاتا ہے۔ ہمارے عہدوں پر براجمان جج تو اس کے لئے کچھ نہیں کر سکتے،گو کہ چند ججوں نے چند ماہ پہلے اس روایت کو توڑ دیا ہے،پھر وہ جج حضرات جو وظیفۂ حسن کارکردگی لے رہے ہیں اور جن کی زندگی اس دشت کی سیاحی کو بھگتتے گزری ہے، ان کا تو فرض ہے کہ وہ اپنی آئندہ نسل کے لئے حالات بہتر کر جائیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں