110

غزل

مشتاق احمد نوری
عظمتِ رفتہ کا آئینہ دکھانے نکلے
پھر مجھے لوگ مری یاد دلانے نکلے

دربدر خاک اڑاتے ہیں وہ آشفتہ مزاج
جو مری راہ میں دیوار اٹھانے نکلے

جن کو ہم رند خرابات سمجھتے تھے بہت
ان کے کشکول سے تسبیح کے دانے نکلے

ہم سمجھتے تھے کہ وہ ویران جزیرہ ہوگا
دل کے تہ خانے سے یادوں کے خزانے نکلے

مندمل ہو نہیں پائے تھے پرانے کچھ گھاؤ
میرے احباب نیا زخم لگانے نکلے

آبدیدہ ہوئے وہ اپنی کہانی سن کر
ان کے قصے میں کئی میرے فسانے نکلے

غم و آلام کے جب اس نے لٹائے گوہر
میری آنکھوں سے بھی اشکوں کے خزانے نکلے

میر صاحب نے کہا عشق ہے بھاری پتھر
ہم بھی وہ بار گراں آج اٹھانے نکلے

جن حریفوں کو کبھی گھاس نہ ڈالی میں نے
وہ بھی کم ظرف مجھے آنکھ دکھانے نکلے

ان کے کوچے میں سنور جاتی ہے قسمت نوری
ہم بھی بگڑی ہوئ تقدیر بنانے نکلے

*پٹنہ،بہار۔انڈیا

کیٹاگری میں : غزل

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں